18

زکاة، زمین کے کس پلاٹ پر واجب ہوتی ہے؟

زکاة، زمین کے صرف اس پلاٹ پر واجب ہوتی ہے جو بلا کسی تردد صرف بیچنے کی نیت سے خریدا جائے اور پھر اس نیت پر برقرار بھی رہا جائے، اور جس پلاٹ میں بیچنے کی نیت بالکل نہ ہو یا بیچنے کی نیت برقرار نہ رہے یا خریدتے وقت ہی بیچنے کی نیت مشکوک ہو یا خریدنے کے بعد مشکوک ہوجائے، یعنی: خریدتے وقت بیچنے کے ساتھ مکان یا دوکان بنانے یا اولاد کو ہبہ کرنے وغیرہ کی بھی نیت ہو یا خریدنے کے بعد ان میں سے کوئی نیت بھی ہوجائے تو اس پر زکاة واجب نہیں: قال في الدر (مع الرد کتاب الزکاة قبل باب السائمة: ۳/۱۹۳، ۱۹۴، ط: زکریا دیوبند): وما اشتراہ لہا أي: للتجارة کان لہا لمقارنة النیة لعقد التجارة إھ وفي ص ۱۹۲ منہ: لا یبقی للتجارة ما أي: عبد مثلاً اشتراہ لہا فنوی بعد ذلک خدمتہ إھ․

واللہ تعالیٰ اعلم

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں