135

عورت اور مرد کے ٹوٹے ہوئے بالوں کو پھینکنا


سوال
 عورتوں کے سرمیں  کنگھی کرتے وقت جو بال کنگھی میں نکل آتے ہیں،ان بالوں کا شرعی حکم کیا ہے؟  ان بالوں کو جلانا یا کچرے میں پھینکنا جائز ہے؟ اسی طرح داڑھی اور مردوں کے سر کے گرے ہوئے بالوں کا حکم کیا ہے؟

جواب
سر یا داڑھی کے بال انسانی جسم کا حصہ ہونے کی وجہ سے قابلِ احترام ہیں،  نیز اجنبی مرد کے لیے عورت کے ٹوٹے ہوئے بالوں کو دیکھنا بھی جائز نہیں ہے، اس لیے سر میں کنگھی کرتے ہوئے عورتوں کے جو بال گر جائیں انہیں کسی جگہ دفنا دینا  چاہیے، اگر دفنانا مشکل ہو تو کسی کپڑے وغیرہ میں ڈال کر ایسی جگہ ڈال دیے جائیں  جہاں کسی اجنبی کی نظر نہ پڑے ۔

 نیز مردوں کو بھی ناخن اور بال وغیرہ کسی زمین میں دفنا دینا مستحب ہے، اگر دفنانے کی سہولت نہ ہو تو ایسی جگہ مٹی میں ڈال دیے جائیں جہاں گندگی اور ناپاکی نہیں ہو.
قال العلامة الحصکفي رحمه الله تعالی: “و کل عضو لا یجوز النظر إلیه قبل الانفصال، لا یجوز بعده و لا بعد الموت، کشعر عانة و شعر رأسها”. ( الشامیة ٦ / ٣٧١ ) فقط واللہ اعلم

فتوی نمبر : 144004200154

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں