لکھے گئے کپڑے کو تکیہ یا دسترخوان بنانے کا حکم ؟

لکھے گئے کپڑے کو تکیہ یا دسترخوان بنانے کا حکم ؟

الجواب حامدا ومصلیا ومسلما

اگر کسی کپڑے پر قرآن کریم کی آیات یا احادیث مبارکہ لکھی گئی ہوں تو آیات مبارکہ یا احادیث مبارکہ کے ہوتے ہوئے اس کپڑے سے تکیہ یا دسترخوان وغیرہ بنانا بالکل جائز نہیں ،

لیکن اگر کپڑے پر قرآن کریم کی آیات یا احادیث مبارکہ کے علاوہ کوئی عام تحریر لکھی گئی ہو تو اس سے تکیہ بنانا تو جائز ہے ،
تاہم اسے دسترخوان بنانا مناسب نہیں ،

لف شيء في كاغذ فيه مكتوب من الفقه، وفي الكلام: الأولى أن لايفعل، وفي كتاب الطب: يجوز، ولو كان فيه اسم الله تعالى أو اسم النبي عليه الصلاة والسلام يجوز محوه ليلف فيه شيء ومحو بعض الكتابة بالريق، وقد ورد النهي عن محو اسم الله تعالى بالبصاق، ولم يبين محو كتابة القرآن بالريق هل هو كاسم الله تعالى أو كغيره ط”.(رد المحتار 6 / 387 ط: سعید)

فقط وﷲ اعلم باالصواب
محمد مستقیم عفاالله عنه

Leave a Reply